World Shia Forum

Identity, Equality, Unity

Analysing the Syria Situation – An interview to SHAFAQNA

SHAFAQNA exclusive | Dr. Muhammad Rehan Naqvi analyses the situation in Syria

This is the English version of the interview that I gave to SHAFAQNA analysing the overall situation in Syria. The original interview was in Urdu, which is posted in a separate blog.

SHAFAQNA (Shia News Association)
 – Dr. Sayyed Muhammad Rehan Naqvi is a freelance journalist based in Norway. In a special interview with SHAFAQNA, he analysed the overall situation in Syria and also discussed a few possible solutions to bring about peace in Syria. Dr. Naqvi utterly criticised the mainstream world media and also said that the international community is not playing its part the way it should in resolving the conflict in Syria. Moreover, he said that the mainstream media has been frequently circulating around unauthentic and fabricated reports and videos as confirmed news items from Syria. The detailed interview of Dr. Naqvi by SHAFAQNA’s correspondent is given in the following.

SHAFAQNA: What are your general views on the overall situation in Syria?
DR. NAQVI: This is a very vast and complicated issue with so many aspects that it can be a bit difficult to cover them all in one sitting.  A few days ago I was pondering over writing a blog with the title ‘It’s all about Syria’’ and present my views on Syria in the context of Arab spring and especially the role of the media in this conflict… and write about the frustrations and hopelessness that people like myself or others may feel at times, looking at how the media is trying to shape up the public opinion on Syria and the things happening in that part of the world. The time the Arab Spring started, it seemed as if it won’t stop until it reaches Syria. And now you can see that Syria is in the spotlight and other “revolutions” are not that much in the world’s focus at the moment.
The situation in Syria has become very complicated now and one of the reasons for that is the involvement of many stakeholders in the conflict. USA, Israel, NATO, Saudi Arabia, Qatar, Turkey, Iran, Lebanon, Russia, China and a few European countries. Due to all of this, Syria has become sort of a focal point in the Middle East. When we look at Egypt and Tunisia for instance, they did not have so many stakeholders involved and yet those countries experienced a lot of bloodshed and anarchy. So, one can imagine how serious the situation in Syria could be.
SHAFAQNA: How do you see the role of the media in case of Syria?
DR. NAQVI: The prevalent rule in today’s world is “might is right”. The mainstream media is absolutely biased, in my point of view. I think there are very few really authentic news that are reaching the people outside Syria. Usually, focus of the bulk of the news is that the Syrian government is killing the civilians and that the majority does not want Bashar Al-Asad. One key rule of reporting a conflict that was taught during our journalism education is that one must always present opinions of all sides involved in the conflict. But who cares about that rule in reality?
In my point of view the mainstream media is just serving the purpose to further the colonial and imperialistic and expansionist agenda. I do not mean that Bashar is an ideal ruler or that there is nothing wrong in Syria. But I think this is wrong to say that he has no public support. I believe he still enjoys support of a considerable majority of the Syrian population. And in support of this statement I give the reason that he has withstood all the pressure, foreign intervention, foreign-incited revolution and internal terrorism so far. Hosni Mobarak and Zain al Abedeen bin Ali were very strong dictators. They also enjoyed the support by USA and Israel. But nevertheless, when the people’s real revolution started they could not withstand more than a few months.
In case of Syria, despite all the pressure from outside and all the internal problems, we have seen that the government has withstood the rebellion. And we have not seen any large scale of people’s revolution across the country. This proves that he still enjoys support of the majority.
But unfortunately, most of the people in this world do not have the time or the resources to investigate matters thoroughly or do in-depth analysis. They form their opinions on the basis of what the media shows them every day. And in case of Syria the media is trying its best to shape the public opinion that the current Syrian government must be eliminated at any cost. And this they have done by showing images and footages and reports of atrocities that no one knows how many of them are authentic.
SHAFAQNA: Can you tell us more about the authenticity of the news from Syria?
DR. NAQVI: I think that there are a lot of fabricated news items circulating around, especially on the social media. Sometimes the news is true but it is blown out of proportion. Sometimes the sources are not reliable enough and nevertheless the news story is “sold”. This is my personal impression. But there is one concrete example of news fabrication for the propaganda sake. A few weeks ago BBC published a picture on its website in which a child was shown running around hundreds of dead bodies in corpse bags. The caption text included Syria in it. Now it was originally a picture from 2003 in Iraq taken by an Italian photographer. He says that when he saw the picture posted on BBC website in relation to Syria, he nearly fell off the chair. BBC did remove the picture quickly but the damage was done and Press TV had already saved the webpage shot and published it on its website.
But you see, not much hue and cry was heard after this unethical practice of BBC. I think that this news hardly made it to the newspapers in Norway or other European countries. I don’t even remember reading about it in the Pakistani media. But in essence, it was a grave breach of the journalism ethics rules. And by the time an apology is made the news item would have left its impression on the public opinion. It would have done its work.
SHAFAQNA: We see that a few countries have openly made statements about providing financial support and weapons to the rebels in Syria. What is your opinion on that?
DR. NAQVI: Saudi Arabia and Qatar have openly admitted that they support and will continue to support the rebels in Syria. While, it is an open secret, and I even read comments on a Norwegian social media website by a native Norwegian, that there are Al-Qaida terrorists among the rebels. There are even reports that these are the Al-Qaida terrorists who are leading the rebels. But no one has condemned Saudi Arabia and Qatar – the key allies of the USA. Even in USA, there have been talks about supporting the rebels. Had Iran supported the people in Bahrain, and they indeed have a legitimate revolution, you can imagine how would the USA and the mainstream media react to that?
SHAFAQNA: You have mentioned Bahrain. We see that there is so much focus on the issue of Syria, but nowhere in the media have we heard anything about Bahrain. Why is that so?
DR. NAQVI: There has been so much violation of human rights, bloodshed and atrocities committed by the ruling Bahraini regime but the world community has not reacted to it. Unfortunately, a common man on the street in Europe or America, and even in Muslim countries for that matter, does not know anything about the oppression of Bahrainis. Bahrain was invaded by the Saudi military forces, although upon request from the Al-Khalifa regime, but still it was a foreign intervention. Also, there have been Pakistanis hired from Pakistani cities, especially to crack down on the Bahraini civilians. But you see that there has been no mentioning of all that in the media. This is because the Bahraini ruling regime is a friend of the USA and other powers with imperialistic and expansionist agendas. Bashar Al-Asad, on the other hand, is an enemy of Israel and the USA. He also supports the Palestinian cause, Hezbollah and Iran. That is why this is Syria that is being presented as a demon in the mainstream media.
SHAFAQNA: How can Iran play its role in resolving the Syria conflict?
DR. NAQVI: A few days ago the Russian deputy foreign minister said that Iran can play a constructive role in striking peace in Syria. Kofi Annan has said that there should be formed an international group to resolve the conflict in Syria. I think Iran should be included in that; although, there is resistance from the USA on including Iran. But in my point of view, including Iran is inevitable.
SHAFAQNA: If Syria is attacked, what will be its impact on the region?
DR. NAQVI: The repercussions of an attack on Syria won’t be less severe than an attack on Iran. As I said earlier, this conflict has involvement and interests of many stakeholders. And now China and Russia, especially Russia are involved too. At the same time, Iran also has a joint defence agreement with Syria. So, a war on Syria will engulf the whole region into it. I don’t think that USA or Israel would want to get directly involved and attack Syria. If the attack were to be in their plans, they would use Turkey, which already has repeatedly made statements about sending its forces inside the Syrian borders. And if Turkey attacks Syria, it will have full backing and support from the imperialistic powers of the West as well as monarchies like Saudi Arabia and Qatar and the followers of the ideologies like Wahhabism and Salafism.
SHAFAQNA: In your opinion, what can be the solution to the problem in Syria?
DR. NAQVI: The powerful countries with the aspirations of world dominance, that is USA and their allies, in particular Israel and Saudi Arabia, just want to corner Syria. This also has to do with the link that Syria provides between Iran and Hezbollah. In order to re-establish peace in Syria, a lot of work will be needed from a number of players and especially the international community. The problem is that due to the foreign intervention, the rebels have the money and the weapons. And this has complicated the situation inside Syria very much. But, nevertheless, it is possible to re-establish peace in Syria. The international community would have to play its role for this. Saudi Arabia, Qatar and other countries that provide support to the rebels would have to be stopped. And then the Syrian government would have to be given the freehand to crush the rebels, just like the Sri Lankan government was given. And with freehand I mean that no blame should be laid on the government when it crushes the rebels, once again just like in Sri Lanka. USA and NATO would have to let go their wishes and show flexibility. At the same time Iran, Russia and China would have to continue their stance on Syria and Turkey would have to act more reasonably and responsibly. With all that peace can be re-established in Syria, at least for a few years. But my opinion is that now the USA has no place for Bashar Al-Asad.   
Source : http://nakvisson.blogspot.com/

اکٹر سید ریحان رضا نقوی، نوروے میں‌مقیم فری لانس صحافی اور پریس ٹی وی کے نمائندہ ہیں۔ شفقنا سے خصوصی بات کرتے ہوئے انھوں‌نے شام کی صورت حال پر مجموعی طور پر روشنی ڈالی اور قیام امن کے حوالے سے چند تجاویز پیش کیں۔ آپ نے عالمی میڈیا پر کڑی تنقید کی اور کہا کہ عالمی برادری اپنی ذمہ داریاں‌ ادا نہیں‌کر رہی۔ ڈاکٹر ریحان کا کہنا تھا کہ شام سے اصل خبروں‌کو پس پشت ڈال کر من گھڑت تحریریں‌اور ویڈیوز بنائی جا رہی ہیں۔ آپ کے انٹرویو کی تفصیلات درج ذیل ہیں۔

شفقنا ۔ ڈاکٹر ریحان ہم آپ کے شکر گزار ہیں‌کہ آپ نے شفقنا کے لیے وقت نکالا، ہمارا آپ سے پہلا سوال یہ ہے کہ شام کے حالات پر آپ کے عمومی تاثرات کیا ہیں؟

ڈاکٹر ریحان: دیکھیں یہ ایک بہت وسیع بحث ہے جس کے تمام پہلوؤں کا احاطہ مشکل ہے۔ میں کچھ دن پہلے یہ سوچ رہا تھا ہے کہ ایک مضمون لکھوں‌جس کا نام رکھوں ‘Its all about Syria۔ اور اس میں کچھ ذاتی تاثرات اور میڈیا جس طریقے سے چیزوں کو پیش کر رہا ہے، اور ایک مایوسی جو میرے جیسے بندے یا دوسرے دوستوں‌کے اندر جنم لے رہی ہے کہ شام کو کس طرح پیش کیا جا رہا ہے، ان تمام چیزوں‌کے بارے میں‌لکھوں۔ جب عرب سپرنگ شروع ہوئی تو اسی وقت سے لگتا تھا کہ یہ معاملہ شام تک ضرور جائے گا۔ آپ دیکھتے ہیں‌کہ سارا معاملہ سمٹ کر شام پہ رک گیا۔ صورت حال بہت زیادہ پیچیدہ ہو گئی ہے،شام کے اندر اتنے زیادہ سٹیک ہولڈز شامل ہیں‌کہ یہ سنٹر پوانٹ بنا ہوا ہے، ان میں امریکہ، نیٹو، ترکی، سعودی عرب، قطر، روس، چائینہ، لبنان، اسرائیل، ایران، بعض یورپنی ممالک شامل ہیں۔ ایران اور شام کا جوائنٹ دیفنس معاہدہ ہے، آپس میں‌کمرشل پارٹنرز بھی ہیں۔ اس کے برعکس ہم دیکھیں تو مصر اور توینس میں‌اس طرح کی صورت حال نہیں‌تھی، یعنی اتنے ممالک شامل نہیں‌تھے پھر بھی صورت حال بہت بگڑی تو اس لحاذ سے آپ شام کے حالات کا جائزہ لے سکتے ہیں۔

شفقنا۔ شام کے حوالے سےآپ میڈیا کے کردار کو کس نظر سے دیکھتے ہیں؟

ڈاکٹر ریحان: آج کل کے زمانے کا دستور یہ ہے کہ جس کی لاٹھی اس کی بھینس، میڈیا بالکل جانبدارانہ رپورٹنگ کر رہا ہے۔ بہت کم خبریں ہم تک پہنچتنی ہیں جو حقیقت کے قریب ہوں۔ ورنہ تو یہی دیکھایا جاتا ہے کہ بشار الاسد کی فوجیں‌بندوں‌کو مار رہی ہیں‌۔ میڈیا کا ایک اصول جو صحافت کی تعلیم کے دوران ہمیں‌پڑھایا گیا تھا وہ یہ تھا کہ آپ کسی بھی مسلئے پر ہمیشہ دونوں پارٹیوں کی کہانی سنیں اور اس کے دونوں‌پہلووں‌کو بیان کریں۔ لیکن یہاں پر دوسری سایڈ کی کون سنتا ہے، شام کے مسئلے پر یک طرفہ رپورٹنگ کی جا رہی ہے۔ اور میں‌اس کو اسطرح بیان کروں‌گا کہ میڈیا استکباری نقطہ نظر سے چیزوں‌کو پیش کررہا ہے۔ میں یہ نہیں‌کہتا ہے شام میں‌سب اچھا ہو رہا ہے، بشار الاسد بھی کوئی فرشتہ نہیں‌ہے لیکن ابھی بھی اس کے پاس بہت زیادو عوامی حمایت موجود ہے۔ اسکی دلیل یہ ہے پوری دنیا اسکے خلاف ہونے کے باوجود وہ ابھی تک باقی ہے، ہمارے سامنے حسنی مبارک اور ذین العابدین کی مثالیں موجود ہیں۔ یہ میرا ذاتی نقطہ نظر ہے، کیوں‌کہ حسنی مبارک ایک مضبوط آمر تھا، امریکہ، اسرائیل، فوج سب اسکے ساتھ تھے، لیکن چونکہ عوام کی بڑی تعداد اس کے خلاف ہوگئی اور وہ نہ ٹھہر سکا۔ کچھ عرصہ پہلے میں‌نے ایک نوروے کے صحافی کو پڑا تو اس نے لکھا تھا کہ بشارالاسد یہ جھٹکا گزار جائے گا۔ بہر کیف میڈیا کے کردار پر بات ہو رہی تھی تو میں‌بتاتا چلوں‌کہ کوئی میڈیا غیر جانبدار ہیں‌ہے۔ اس دنیا میں‌متوازن اور شفاف میڈیا کا وجود ہی نہیں‌ہے۔ اب اس میں سے ہمیں‌یہ تلاش کرنا ہو گا کہ کون سا میڈیا سب سے کم جانبدار ہے، اور اس کو ہی دیکھنا چاہیے۔ لوگوں کے پاس اتنا وقت نہیں ہوتا کہ وہ دو تین اخبارات کے مختلف تجزیے پڑیں یا مختلف چینلز سے خبروں‌کو سنیں، اس دوران جو خبر ان کے کانوں سے ٹکراتی ہے اس کے مطابق ہی وہ اپنی رائے قائم کر لیتے ہیں۔ میڈیا کی پوری کوشش ہے کہ ظلم اتنا دیکھایا جائے کہ لوگوں‌ کے ذہنوں‌میں یہ بات بیٹھ جائے اورشام کی حکومت کی مخالفت اور زیادہ بڑھے۔

شفقنا۔ ہم دیکھتے ہیں‌کہ بعض ممالک شام کے باغیوں کو اسلحہ کی فراہمی اور امداد دینے کا اعلان کرتے ہیں‌، آپ اس پہ کیا کہتے ہیںِ؟

ڈاکٹر ریحان: جی ہاں‌سعودی عرب اور قطر تو کھلے عام ایسے بیان دیتے ہیں‌اور انکی امداد بھی کی جاتی ہے ۔دوسرے ممالک کے معاملات میں‌مداخلت کرنا ، باغیو ں‌ کو اسلحہ اور پیسہ پیش کرنا، یہ نا انصافی اور ظلم ہے۔ سب سے دردناک بات یہ ہے کہ ساری دنیا تماشا دیکھ رہی ہے۔ سوشل میڈیا پر عام لوگ یہ بات کرتے دیکھائی دیتے ہیں‌کہ باغیوں‌کے اندر القائدہ کے عناصر پائے جاتے ہیں۔ اگر ایران بحرین کو اسطرح مددکرتا تو صورتحال کہاں‌سے کہاں‌پہنچ چکی ہوتی۔ رشیا ٹوڈے کی ایک ویڈیو بہت زیادہ منظر عام پر رہی جس میں سعودی عرب میں‌ایک بندے کی منڈی لگائی گئی کہ وہ شام جا کر خودکش بمبار بنے گا، اور وہ چار لاکھ ڈالر میں بکا۔ ایک بہت بڑا پراپیگنڈا جو شروع کیا گیا ہے وہ یہ ہے کہ شیعہ لوگ علویوں کے ساتھ مل کر سنیوں‌کو مار رہے ہیں۔ یہ اس لیے کیا جا رہا ہے کہ ثابت کیا جائے کہ وہاں‌پر ظلم ہو رہا ہے۔ بی بی سی نے ایک اٹیلین فوٹو گرافر کی 2003 کی تصویر جو اس نے عراق میں کھینچی تھی، وہ لگا کر یہ رپورٹ بنائی کہ حولہ، شام میں‌عوام کا قتل عام ہو رہا ہے۔ اور نیچے لکھ دیا ہے کہ ہم اس کی تصدیق نہیں‌کر سکتے۔ اسی دوران پریس ٹی وی نے وہ تصویر محفوظ کر لی اور اسی طرح اس فوٹو گرافر نے کہا کہ جب میں نے اپنی بنائی ہوئی تصویر دیکھی تو میں‌کرسی سے گر پڑا کہ اتنا بڑاظلم! اب کسی کو کیا پتا کہ وہ کون سی تصویر ہے، عام بندے نے تصور بنا لیا کہ اتنا ظلم ہو رہاہے ۔ یہ ان کا ایک ہتھیار ہے جس کو وہ استعمال کرتے ہیں تاکہ عوامی رائے اپنے حق میں موڑی جا سکے۔

شفقنا۔ شام سے جو خبریں آ رہی ہیں‌ان کی صحت کے بارے میں‌کیا کہیں‌گے؟ سوشل میڈیا کا رخ کس جانب ہے؟

ڈاکٹر ریحان: میرے ذاتی خیال میں‌شام سے جتنی ویڈیو رپورٹس آتی ہیں وہ اپنی مرضی کے مطابق گھڑی جاتی ہیں۔ خبر بے شک درست ہو گی لیکن اس کی جزیات میں جھوٹ بولا جاتا ہے۔ وہ خبر متواتر نہیں‌ہوتی بلکہ خبر واحد ہوتی ہے جسکو صحیح بنا کر لگا دیا جاتا ہے۔ بعض ویڈیوز میں‌آپ نوٹ کریں‌گے کہ صاف جھوٹ بولا جا رہا ہے، اور ایکٹنگ کی جا رہی ہے۔ کچھ پتا نہیں‌کون کیا کر رہا ہے۔ بعض خبر رساں ایجنسیاں‌خود ہی خبریں‌بنا کر لگا دیتی ہیں‌کیونکہ پوچھنے والا تو کوئی ہے ہی نہیں‌۔ لوگوں کی رائے بنانے میں‌ پہلی خبر تو اپنا کام کر جاتی ہے، بعد میں خبر کی تردید بھی کردی جاتی ہے لیکن اس وقت وہ اپنا کام کر چکی ہوتی ہے۔سوشل میڈیا کو کسی بھی طور پر نظر انداز نہیں‌کیا جاسکتا ہے، یہ کسی بھی طرح ٹی وی سے کم نہیں‌ہے۔ میرے خیال سے سوشل میڈیا پر بعض چیزیں‌ایسی آئی ہیں‌جن نے لوگوں‌کی آنکھیں‌کھولی ہیں، حال ہی ہم نے دیکھا کہ پاکستان کے صحافیوں‌کے حوالے سے ایک ویڈیو منظر عام پر آئی، تو اس لحاظ سے دیکھا جائے تو سوشل میڈیا اپنا وجود منوا رہا ہے۔

شفقنا۔ ہم نے دیکھا کہ ایک طرف شام پر اتنی توجہ دی جا رہی ہے اور دوسری طرف بحرین کا نام ہی نہیں‌لیا جاتا اس کیا وجہ ہے؟

ڈاکٹر ریحان : بحرین میں جتنا ظلم ہوا ہے، اتنا ہی لوگ اس سے بے خبر ہیں‌کیونکہ لوگوں تک خبریں پہنچی ہی نہیں۔ بحرین کے اندد دوسرے ملک کی فوج آتی ہے اور وہ بندوں‌کو مارتی ہے اگرچہ اس کے اپنے ملک کے حکمران نے ھی اس فوج دعوت دی ہو۔پاکستان جیسے ملک میں‌بھی ایسے اشتہارات چلے کہ بحرین میں تجربہ کار سیکیورٹی کے لیے بندے درکار ہیں۔ وہ پاکستان سے خاص مایئنڈ سیٹ کے لوگوں کو وہاں لے جاتے ہیں‌تاکہ وہاں‌مقامی لوگوں‌کو مارنے میں‌انہیں‌تردد نہ کرنا پڑے۔ ایک طرف سے یہ ہو رہا ہے، اور دوسری وہ یہ الزام لگاتے ہیں‌کہ شام میں‌اقلیت اکژیت کو مار رہی ہے یعنی شیعہ علویوں‌کے ساتھ مل کر سنیوں‌کو مار رہے ہیں۔ وہاں‌پر ان کو انسانی حقوق کی پامالی کا احساس نہیں ہے جبکہ شام والے مسئلے کو وہ اور رنگ دیتے ہیں۔ یہ کھلی منافقت ہے ، میڈیا ان غاصبوں کا بھر پور ساتھ دے رہا ہے۔ بحرین کی کوئی کوریج نہیں‌دی گئی اور شام کو ایک عفریت بنا کر پیش کیا جا رہا ہے۔ یہ صرف اور صرف اس لیے کہ شام کی حکومت اسرائیل کے لیے خطرہ ہے، ایران اور حزب اللہ کی دوست ہے۔ وہ کیوں‌ کرچاہیں گے کہ شیعہ کسی بھی جگہ مضبوط ہوں۔

شفقنا۔ اس ساری صورت حال میں‌ ایران کا کردار بہت واضع ہے ، آپ کیا سمجھتے ہیں‌کہ ایران کیا کردار ادا کر رہا ہے، اور اسکو کیسا کردار ادا کرنا چاہیے؟

ڈاکٹر ریحان: کچھ دن پہلے روس کے ڈپٹی وزیر خارجہ نے ایک بیان دیا جس میں‌انہوں‌نے کہا تھا کہ ایران شام کے مسئلے کے حال کے لیے ایک تعمیری کردار ادا کر سکتا ہے۔ کوفی انان نے کہا تھا کہ ایک انٹر نیشنل گروپ بنایا جائے جو پہلےشام کے مسئلے پرقابو پائے۔ میرے خیال سے ایران ایک مرکزی کردار ادا کر سکتا ہے اور اس سلسلے میں روسی وزیر کی تجویز نہایت ہی مناسب اور موزوں ہے اور اس پر فوری عمل درآمد کرنا ہوگا تاکہ شام کے مسئلے کو جلد از جلد حل کی طرف لے جایا جائے۔

شفقنا: اگر شام پر حملہ کیا گیا تو اس کے خطے پر کیا اثرات مرتب ہوں‌گے؟
ڈاکٹر ریحان: شام پر حملہ کی سنگینی ایران پر حملے سے کم نہیں ہو گی، اور اسے کے نتائج پور ے خطے پر بہت ہی گہرے ہوں گے، یہ ایک بہت بڑی جنگ کا آغاز ہو گا۔ اب چونکہ روس اور چائینہ بھی اس مسئلے میں براہ راست شامل ہیں‌تو امریکہ اور اسرائیل خود حملہ کرنے سے گریز کریں‌گے، اگر انھوں‌نے حملے کرنا ہوا تو ترکی کو اگے کیا جائے گا، یعنی اس سے حملہ کرائے گا اور اس کو سعودی عرب اور وہابیوں کی پوری حمایت حاصل ہوگی۔

شفقنا۔ شام کے مسئلے کا حل کیا ہو سکتا ہے؟

ڈاکٹر ریحان: دیکھیں استکباری طاقتیں چاہتی ہیں کہ شام کو ایک کونے پر لگا دیا جائے اور اپنے معاملات کو سیدھا کیا جائے، لیکن یہ اتنا آسان نہیں ہے، ایران، روس اور چائینہ کی جانب سے بہت زیادہ دباؤ ہے۔ ایسا ممکن ہے کہ مسئلے کا پر امن حل تلاش کر لیا جائے، دیر پا امن کے لیے بہت محنت درکار ہے، کیونکہ جو چنگاری لگا دی گئی ہے اس کو بجھانا مشکل ہو گیا ہے، باغیوں کے پا س پیسہ اور اسلحہ آ گیا ہے، ان کے ساتھ نمٹنا آسان نہیں رہا۔ سعودی اور دوسرے ممالک جو باغیوں‌کی امداد کر رہے ہیں‌ان کو فوری روکا جائے، اس کے بعد شام کی فوج کو فری ہینڈ دیا جائے تاکہ وہ ملک کے اندد موجود جتنے دشمن عناصر ہیں‌ان کا صفایہ کر سکیں، اور اس میں‌بھی انٹرنیشنل کمیونیٹی کی ایما شامل ہو تاکہ وہ دوبارہ شام ک فوج پر یہ الزام نہ لگائیں کہ وہ شام کے اندد قتل و غارت کر رہے ہیں۔ انٹرنیشنل کمیونیٹی کو اصلاحاتی پیکج کے حوالے سے اپنا کردار ادا کرنا ہو گا، امریکہ اور نیٹو، یورپی ممالک کو لچک کا مطاہرہ کرنا ہو گا، ایران ، روس اور چائینہ اپنا دباؤ برقرار رکھیں۔ ترکی کو معاملہ فہمی اور عقلمندی کا ثبوت دینا ہو گا۔ میرے خیال سے اسطرح کی حکمت عملی سے کچھ سال کے لیے امن قائم ہو سکتا ہے، لیکن یوں‌لگتا ہے کہ امریکہ کے یہاں بشار الاسد کے لیے کوئی جگہ نہیں ہے۔

About alitaj

One comment on “Analysing the Syria Situation – An interview to SHAFAQNA

  1. Ahad
    July 20, 2012

    This is a proper analysis of situation. People should understand that supporting Al Qaeda against Bashar will Backfire.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

Information

This entry was posted on July 19, 2012 by in WSF and tagged , .
%d bloggers like this: