World Shia Forum

Identity, Equality, Unity

#ShiaGenocide: After killing 21 paramilitary soldiers in Peshawar, Deobandi militants kill 40 Shias in Mastung

Mastung 2

Mastung, Balochistan: Only a few hours Deobandi militants of Sipah Sahaba Taliban (SST) killed 21 paramilitary soldiers in Peshawar (Khyber Pakhtunkhwa), they have attacked a convoy of three buses carrying Shia pilgrims from Quetta to Iran at Darinagar (Mastung, Balochistan) on Sunday 30 Dec 2012. At least 40 persons including twelve women and six children were killed and twenty five wounded in a bomb attack.

Only two days ago, Aurangzeb Farooqi Deobandi, a militant leader of Siph Sahaba Taliban in Karachi had threatened Shia Muslims of Pakistan with death and destruction. Details can be found here: http://criticalppp.com/archives/235607

Mastung Deputy Commissioner Tufail Baloch said that one of the buses carrying 43 passengers was completely gutted, while the other one was partially damaged in a targeted attack, leaving nineteen pilgrims dead and twenty five injured.

Later bomb disposal squad said that a vehicle laden with 70/80 kilograms of explosives parked on the roadside was exploded though a remote control device.

Rescue teams arriving at the scene of incident shifted the injured to Civil Hospital, while the Levies and the police collecting evidences and completing other formalities.

In 2012 alone, more than 620 Shia Muslims have been killed by Deobandi militants of Sipah Sahaba Taliban (SST). In total, more than 20,300 Shia Muslims have been killed in the last few decades what is being increasingly described as slow motion Shia genocide.

In addition to killing Shias, the Deobandi militants have also killed a large number of Sunni Barelvis (Sufis), Ahmadis, Christians etc. They have also attacked and killed a large number of policemen and army soldiers. However, Pakistan army chief General Kayani remains indecisive and has refrained from taking much needed military action against Deobandi militants of Sipah Sahaba (in settled areas) and Taliban (in tribal areas).

Source : LUBP

پاکستان کے صوبہ بلوچستان کے علاقے مستونگ میں شیعہ مسلک سے تعلق رکھنے والے زائرین کی بسوں کو نشانہ بنایا گیا ہے جس کے نتیجے میں چالیس افراد ہلاک اور پچیس زخمی ہوئے ہیں۔ بلوچستان کے سیکریٹری داخلہ اکبر حسین درانی نے بتایا کہ زائرین کی تین بسیں کوئٹہ سے ایران جا رہی تھیں جب ان کو نشانہ بنایا گیا۔

پشاور میں اکیس فوجی جوانوں کو شہید کرنے کے کچھ گھنٹوں کے بعد سپاہ صحابہ طالبان کے تکفیری دیوبندیوں نے بلوچستان میں مستونگ کے مقام پر ایران جانے والی شیعہ زائرین کی ایک بس کو بم دھماکے سے نشانہ بنایا بس میں پینتالیس سے زیادہ شیعہ زائرین سوار تھے جن میں سے چالیس کے شہید ہونے کی تصدیق ہو چکی ہے

دو دن قبل کراچی میں سپاہ صحابہ طالبان کے رہنما اورنگزیب فاروقی دیوبندی نے پاکستان کے شیعہ مسلمانوں کو قتل اور تباہ کرنے کی دھمکی دی تھی فاروقی دیوبندی کے الفاظ میں شیعہ گنتی بھول جائیں گے دو دن کے اندر اس نے اپنا وعدہ پورا کر دیا

یاد رہے کہ صرف رواں سال میں 620 سے زیادہ شیعہ مسلمان سپاہ صحابہ طالبان کے دیوبندی دہشت گردوں کے ہاتھوں شہید ہو چکے ہیں شیعہ نسل کشی میں شہید ہونے والے شیعہ مسلمانوں کی کل تعداد بیس ہزار تین سو سے تجاوز کر چکی ہے

سپاہ صحابہ طالبان کے ہاتھوں ہزاروں سنی بریلوی، احمدی، مسیحی بھی شہید ہو چکے ہیں اسی دہشت گرد گروہ نے ہزاروں پولیس والوں اور فوجیوں کے خون بھی بہایا ہے لیکن پاکستان کے موجودہ فوجی چیف جنرل اشفاق کیانی دیوبندی جہادیوں کے لیے نرم گوشہ رکھتے ہیں اور ان کے خلاف آپریشن کرنے سے کتراتے ہیں

صوبائی سیکریٹری داخلہ نے بتایا کہ کوئٹہ سے پینتیس کلومیٹر دور مستونگ کے علاقے درینگڑھ میں یہ واقعہ پیش آیا۔ صوبائی سیکریٹری داخلہ نے بتایا کہ ان بسوں کے راستے میں ایک سوزوکی گاڑی میں بم نصب کیا گیا تھا۔

انہوں نے بتایا کہ زحمی ہونے والوں میں چار خواتین بھی شامل ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ دھماکے کے بعد بس کو آگ لگ گئی اور مکمل طور پر جل گئی۔ ڈپٹی کمشنر نے مزید بتایا کہ ہلاک ہونے والوں کی لاشیں جل چکی ہیں جس کے باعث شناخت میں مشکل ہو رہی ہے۔
بم ڈسپوزل سکواڈ کا کہنا ہے کہ یہ ریموٹ کنٹرول دھماکہ تھا اور اس میں ساٹھ سے ستّر کلو بارودی مواد استعمال کیا گیا تھا۔
اس سے قبل صوبائی سیکریٹری داخلہ نے کہا ’ان تین بسوں میں سے ایک بس بم دھماکے کے زد میں آئی اور مکمل طور پر تباہ ہو گئی۔‘

ان کا کہنا تھا کہ بسوں کے اس قافلے کے آگے پیچھے لیویز کا سکواڈ تھا۔ ایک سوال کے جواب میں ان کا کہنا تھا کہ یہ خودکش دھماکہ نہیں بلکہ یہ بم گاڑی میں نصب کیا گیا تھا۔

ایک عینی شاہد وزیر خان نے بی بی سی کو بتایا کہ ایک بس مکمل طور پر جل گئی ہے۔ تاہم ان کا کہنا تھا کہ اس وقت یہ معلوم نہیں کہ اس بس میں کتنے لوگ سوار تھے۔

عینی شاہد نے کہا کہ ایسا لگتا ہے کہ کار بم حملہ کیا گیا ہے کیونکہ ایک چھوٹی گاڑی کا انجن بھی جائے حادثہ پر پڑا ہوا ہے۔

About alitaj

2 comments on “#ShiaGenocide: After killing 21 paramilitary soldiers in Peshawar, Deobandi militants kill 40 Shias in Mastung

  1. bluejeans012
    December 30, 2012

    Reblogged this on bluejeans012.

  2. Izaj
    December 30, 2012

    We all must do all we can to stop such hostilities and find out what is the motivating factor which makes people stand against these Shia people and if they are upset about Shias cursing friends of our beloved prophet then Shia Aalims must stress that such cursing be stopped forthwith and hold a dialogue with other side and agree not to repeat either act. Such hostilities must be stopped at all cost.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: