World Shia Forum

Identity, Equality, Unity

جاوید غامدی صاحب کا استدلال طالبان کے استدلال سے کیونکر بہتر ہے؟

Ghamidi

Summary: In his response (dated 1 January 2012) to Taliban’s letter to Pakistani media, renowned Nasibi scholar Javed Ahmed Ghamidi Salafi quotes a tradition in which he suggests that Prophet Muhammad (peace be upon him) allowed the slaughter of innocent children and women along with polytheist men. We argue that this line of reasoning is no better than Taliban’s logic of violence. It shows that Mr. Ghamidi is influenced by violent ideologies of Ibn Taymiyyah Nasibi, Muhammad ibn Abdul Wahhab Salafi Nasibi and Sayyid Qutb Salafi.

For background reading, see this post: Javed Ahmed Ghamidi’s views about Shias and Sufi Sunnis http://criticalppp.com/archives/228942

جاوید غامدی صاحب کا استدلال طالبان کے استدلال سے کیونکر بہتر ہے؟

معروف سلفی عالم دین جاوید احمد غامدی ناصبی نے حال ہی میں یکم جنوری ٢٠١٢ کو تحریک طالبان پاکستان کے پاکستانی میڈیا کے نام خط کے جواب میں اپنے مسلک اور رائے کی وضاحت کی

ہم جاوید غامدی ناصبی سلفی صاحب کے شائستہ اسلوب کی تعریف کرتے ہیں اور اس بات کی قدر کرتے ہیں کہ اگرچہ اہلبیت خاص طور پر حضرت علی اور امام حسین سے عداوت اور یزید و معاویہ کی مدح میں غامدی صاحب اور دوسرے ناصبیوں (بشمول طالبان و سپاہ صحابہ ) کے نکتہ نظر میں خاص فرق نہیں اور تکفیری سلفیوں اور دیوبندیوں کی طرح جناب غامدی صاحب بھی سنی بریلوی یعنی صوفی مسلمانوں اور شیعہ مسلمانوں کو گمراہ مسلمان سمجھتے ہیں لیکن یہ بات قابل قدر ہے کہ غامدی صاحب سنی بریلویوں اور شیعہ مسلمانوں کے خلاف تشدد کو جائز نہیں سمجھتے

ہمارا اصولی موقف ہے کہ جو شخص بھی سنی، شیعہ، بریلوی، دیوبندی، سلفی افراد یا دوسرے مسلک یا فرقے سے تعلق رکھنے والے لوگوں گمراہ، بدعتی، کافر یا مشرک قرار دیتا ہے وہ در حقیقت معاشرے میں عدم برداشت اور تشدد کی راہ ہموار کرتا ہے دوسرے لفظوں میں پاکستان میں جاری شیعہ نسل کشی اور سنی بریلویوں پر ہونے والے تکفیری حملوں اور نفرت انگیزی میں جناب جاوید غامدی ناصبی سلفی صاحب کا بالواسطہ کردار ضرور ہے امید ہے وہ اس بات پر غور فرمائیں گے

http://criticalppp.com/archives/228942

اب آتے ہیں غامدی صاحب کے حالیہ بیان کی جانب جس میں انہوں نے طالبان کے پاکستانی میڈیا کے نام خط کے جواب میں اپنے موقف کو ظاہر کیا اگرچہ ہمیں غامدی صاحب کے موقف کی کچھ باتوں سے اتفاق ہے ہمیں یہ دیکھ کر شدید حیرت ہوئی اور صدمہ پہنچا کہ غامدی صاحب نے رحمت عالم حضرت محمد رسول الله صلی الله علیہ وآله وسلم سےایسی جھوٹی حدیثوں اور روایات کو منسوب کر دیا جن میں رسول پاک مشرکوں کے ساتھ بے گناہ عورتوں اور بچوں کے بلا تخصیص قتل کرنے کا حکم صادر کرتے ہوۓ نظر آتے ہیں

Source: http://www.javedahmadghamidi.com/index.php/editorials/view/talibans-line-of-reasoning

تمام جہانوں کے لئے رحمت بنا کر بھیجے گئے نبی رحمت سے ایسی شقاوت منسوب کرنے کی رسم فقط ابن تیمیہ، محمد بن عبد الوہاب، سید قطب، اسامہ بن لادن،ملا عمر اور تقی عثمانی دیوبندی کے ہاں پائی جاتی ہے

بھلا ہم تصور کر سکتے ہیں کہ رسول رحمت بے گناہ بچوں اور عورتوں کو قتل کرنے کا حکم دیں گے؟ اس قبیح موقف سے ظاہر ہوا کہ جناب جاوید غامدی ناصبی سلفی صاحب اپنے اندر سے وہابیوں اور ابن تیمیہ کے خارجی تکفیری پیرو کاروں کے نظریات کو پوری طرح ختم نہیں کر پائے

اگر ہم ان جھوٹی روایات کو درست تسلیم کر لیں تو غامدی صاحب اور طالبان کے متشدد نظریات میں زیادہ فرق نظر نہیں آتا بلکہ اسلامی طور پر بے گناہ لوگوں کے خلاف تشدد کا جواز فراہم ہو جاتا ہے اسی بنیاد پر تحریک طالبان کا کہنا ہے کہ حضرت محمد (ص) نے جنگ میں عورتوں اور بچوں کو مارنے کا حکم دیا۔

آئیے دیکھتے ہیں اصلی اسلامی پوزیشن اس ترہ کی روایتوں کے بارے میں

امیر المومنین حضرت علی(کرم اللہ وجہہ) نے خارجی شخص کی نشاندہی کرتے ہوۓ فرمایا: “یہ شخص وہ ہے جس نے جہالت کی باتوں کو (ادھر ادھر سے ) بٹور لیا ہے ۔امن و آشتی کے فائدوں سے آنکھ بند کر لیتا ہے ۔ اگر کوئی الجھا ہوا مسئلہ اس کے سامنے پیش ہوتا ہے تو اپنی رائے کے لئے بھرتی کی فرسودہ دلیلیں مہیا کر لیتا ہے اور پھر اس پر یقین بھی کر لیتا ہے۔ اس طرح وہ شبہات کے الجھاؤ میں پھنسا ہوا ہے جس طرح مکڑی خود ہی اپنے جالے کے اندر ۔ وہ خود یہ نہیں جانتا کہ اس نے صحیح حکم دیا ہے یا غلط۔؟ نہ اس نے حقیقت علم کو پرکھا نہ اس کی تہ تک پہنچا ۔ وہ روایات کو اس طرح درہم و برہم کرتا ہے جس طرح ہوا سوکھے ہوئے تنکوں کو ۔ جس چیز کو وہ نہیں جانتا اس کو وہ کوئی قابلِ اعتنا علم ہی قرار نہیں دیتا اور یہ سمجھتا ہی نہیں کہ جہاں تک وہ پہنچ سکتا ہے اس کے آگے کوئی دوسرا پہنچ سکتا ہے۔ جو بات اس کی سمجھ میں نہیں آتی اسے پی جاتا ہے، کیونکہ وہ اپنی جہالت کو خود جانتا ہے ۔ ان لوگوں میں قرآن سے زیادہ کوئی بے قیمت چیز نہیں جب اسے اس طرح پیش کیا جائے جیسا پیش کرنے کا حق ہے اور جب اس کی آیتوں کا بے محل استعمال کرنا ہو تو قرآن سے زیادہ ان میں کوئی مقبول اور قیمتی چیز نہیں!!”۔ نهج البلاغة، خطبہ 17

عبد اللہ بن عمر رضی اللہ عنہ نے بیان کیا کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے خالد بن ولید رضی اللہ عنہ کو بنی جذیمہ کی طرف بھیجا ۔ خالد بن ولید رضی اللہ عنہ نے انہیں اسلام کی دعوت دی لیکن انہیں ” اسلمنا “ ( ہم اسلام لائے ) کہنا نہیں آتا تھا ، اس کے بجائے وہ ” صبانا ، صبانا “ ( ہم بے دین ہوگئے ، یعنی اپنے آبائی دین سے ہٹ گئے ) کہنے لگے ۔ خالد رضی اللہ عنہ نے انہیں قتل کر نا اور قید کر نا شروع کر دیا اور پھر ہم میں سے ہر شخص کو اس کا قیدی اس کی حفاظت کے لیے دے دیا پھرجب ایک دن خالد رضی اللہ عنہ نے ہم سب کو حکم دیا کہ ہم اپنے قیدیوں کو قتل کر دیں ۔ میں نے کہا اللہ کی قسم میں اپنے قیدی کو قتل نہیں کروں گااور نہ میرے ساتھیوں میں کوئی اپنے قیدی کو قتل کرے گاآخر جب ہم رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں حاضر ہوئے اور آ پ سے صورت حال بیان کیا تو آپ نے ہاتھ اٹھا کر دعاکی ۔ اے اللہ ! میں اس فعل سے بیزار ی کا اعلان کرتاہوں ، جو خالد نے کیا ۔ دومرتبہ آپ نے یہی فرمایا

وا ان قولوا اسلمنا قال فضعوا السلاح فوضعوہ فقال لھم استاسروا فاستاسروا القوم فامر بعضھم فکتف بعضا وفرقھم فی اصحابہ فلما کان فی السحر نادی خالد بن الولید کان معھم اسیر فلیضرب عنقہ فاما بنو سلیم فقتلوا من کان فی ایدیھم واما المھاجرون والانصار فارسلوا اسراھم فبلغ النبی صلی اللہ علیہ وسلم ما صنع خالد فقال اللہم انی ابرا الیک مما صنع خالد وبعث علیا یودی لھم قتلاھم وما ذھب منھم ( زاد المعاد ) یعنی جب حضرت خالد بن ولید رضی اللہ عنہ عزی کو ختم کر کے لوٹے اس وقت رسول کریم صلی اللہ علیہ وسلم مکہ ہی میں موجود تھے ۔ آپ نے ان کو بنی جذیمہ کی طرف تبلیغ کی غرض سے بھیجا اور لڑائی کے لیے نہیں بھیجا تھا ۔ حضرت خالد رضی اللہ عنہ ساڑھے تین سو مہاجر اور انصار صحا بیوں کے ساتھ نکلے ۔ کچھ بنو سلیم کے لوگ بھی ان کے ساتھ تھے ۔ جب وہ بنو جذیمہ کے یہا ں پہنچے تو انہوں نے ان سے پوچھا کہ تم کون لوگ ہو؟ وہ بولے ہم مسلمان ہیں ، نمازی ہیں ، ہم نے حضرت محمد ا کاکلمہ پڑھا ہوا ہے اور ہم نے اپنے والانوں میں مساجد بھی بنا رکھی ہیں اور ہم وہاںاذان بھی دیتے ہیں ، وہ سب ہتھیار بند تھے ۔ حضرت خالد نے پوچھا کہ تمہارے جسموں پر یہ ہتھیار کیوں ہیں ؟ وہ بولے کہ ایک عرب قوم کے اور ہما رے درمیان عداوت چل رہی ہے ۔ ہما را گمان ہوا کہ شاید تم وہی لوگ ہو ۔ یہ بھی منقول ہے کہ ان لوگوں نے بجائے اسلمنا کے صبانا صبانا کہا کہ ہم اپنے پرانے دین سے ہٹ گئے ہیں ۔ حضرت خالد رضی اللہ عنہ نے حکم دیا کہ ہتھیا ر اتاردو۔ انہوں نے ہتھیار اتار دئے اور خالد رضی اللہ عنہ نے ان کی گرفتاری کا حکم دے دیا۔ پس حضرت خالد رضی اللہ عنہ کے ساتھیوں نے ان سب کو قید کر لیا اور ان کے ہاتھ باندھ دئے۔ حضرت خالد رضی اللہ عنہ نے ان کو اپنے ساتھیوں میںحفاظت کے لیے تقسیم کر دیا ۔ صبح کے وقت انہوں نے پکا ر اکہ جن کے پاس جس قدر بھی قیدی ہوں وہ ان کو قتل کر دیں ۔ بنوسلیم نے تو اپنے قیدی قتل کردئے مگر انصار اور مہاجرین نے حضرت خالد رضی اللہ عنہ کے اس حکم کونہیں مانا اور ان قیدیوں کو آزاد کر دیا ۔ جب اس واقعہ کی خبر رسول کریم صلی اللہ علیہ وسلم کو ہوئی تو آپ نے حضرت خالد رضی اللہ عنہ کے اس فعل سے اظہاربیزاری فرمایا اور حضرت علی رضی اللہ عنہ کو وہا ں بھیجا تاکہ جو لوگ قتل ہوے ہیں ان کا فدیہ اداکیا جائے اور ان کے نقصان کی تلافی کی جائے۔

صحیح بخاری -> کتاب المغازی & مشکوة، قیدیوں کے احکام کا بیان : حضرت خالد کی طرف سے عدم احتیاط کا ایک واقعہ

ہم امید کرتے ہیں کہ غامدی صاحب اپنے سلفی ناصبی اور مبہم تشدد پسندانہ موقف پر نذر ثانی کریں گے اور ابن تیمیہ، محمد بن عبد الوہاب اور معاویہ کے اسالیب سے برات کا اظہار کریں گے

Source : http://criticalppp.com/archives/237339

About alitaj

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

Information

This entry was posted on January 7, 2013 by in WSF and tagged , .
%d bloggers like this: